تازہ ترین
مولانا فضل الرحمان کا دھرنے کا اعلان۔ کنٹینرز بھی بنوالئےالیکشن کمیشن ارکان کے مستقبل کا فیصلہ ہونے کے قریبزلزلے سے اموات کی تعداد 38 ہوگئی۔ سینکڑوں افراد بے یارو مددگاربائیو میٹرک تصدیق کے باوجود بینک اکاؤنٹس آپریشنل نہ ہونیکی شکایاتملکی تاریخ میں پہلی بار مرغی 400 روپے کی ہوگئیگستاخ ٹیچر نوتن لعل کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہنارتھ کراچی صنعتی ایریا میں ڈاکوؤں کا راجپنجاب حکومت نے ایڈز کنٹرول پروگرام کے فنڈز روک لئےافغانستان میں این ڈی ایس کمپاؤنڈ کے قریب دھماکہ۔ 30 ہلاکافغان طالبان کے حملے تیز۔ غنی حکومت کیلئے الیکشن درد سر بن گیاپولیسٹر فلامنٹ یارن پر دوبارہ ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کئے جانے کا امکانسیاسی قیدیوں کو ڈیل پر مجبور کرنے کیلئے بلیک میلنگ شروعوفاق میں ساری ٹیم مشرف کی ہے۔ رضا ربانیپی ٹی آئی حکومت کے خاتمے کیلئے نواز شریف کا بڑا فیصلہسنسرشپ کا سامنا کرنے والے ممالک میں پاکستان کا 39واں نمبردورہ پاکستان کیلئے سری لنکا کی بے بی ٹیم کا اعلانبھارت کشمیر سے کرفیو کیوں نہیں اٹھا رہا؟ پاکستانی حکومت غافلجنوبی افریقہ: ہر 3 گھنٹے میں ایک عورت قتل کردی جاتی ہےعدلیہ نے ملک کو تباہی کے دہانے پر پہنچا دیا۔ حشمت حبیبپنجاب پولیس کی حراست میں 17 افراد کی ہلاکت کا انکشاف

پی ٹی آئی حکومت کا پہلا سال ’’مہنگائی کا سال‘‘ قرار

pti government
  • واضح رہے
  • ستمبر 5, 2019
  • 7:58 شام

ایک برس میں مہنگائی کی شرح 11.63 تک پہنچ گئی، جس سے آٹا، چینی، چاول، گوشت، دودھ خواہ ہر ہر قسم کی اشیا کی قیمت میں اضافہ ہوا۔

پی ٹی آئی حکومت کے پہلے سال کو عوام نے "مہنگائی کا سال" قرار دے دیا ہے۔ عوام کی اکثریت نے پی ٹی آئی حکومت کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ عمران خان کے پاس عام آدمی کی زندگی بہتر کرنے کا کوئی پلان نہیں ہے۔ ان کا ہر دعویٰ الٹ ثابت ہو رہا ہے۔ پٹرول، بجلی، گیس اور اشیائے  خورونوش کی قیمتوں میں کمی کے دعویداروں نے عوام کی کمر توڑ کے رکھ دی ہے۔

پی ٹی آئی حکومت کے پہلے سال میں ملک بھر میں مہنگائی میں نمایاں اضافہ دیکھنے میں آیا اور مہنگائی کی شرح 11.63 فیصد تک پہنچ گئی۔ ادارہ شماریات کے اعداد و شمار کے مطابق اگست 2018 کے مقابلے اگست 2019 میں ملک بھر میں مہنگائی کی شرح 5.84 سے بڑھ 11.63 فیصد ہوگئی۔

اعداد و شمار کے مطابق ایک سال میں 10 کلو گرام گندم 29 روپے اور آٹے کا 10 کلوگرام کا تھیلا 39 روپے مہنگا ہوا۔ علاوہ ازیں باسمتی چاول کی قیمت میں 6 روپے فی کلوگرام اضافہ ہوا۔

ادارہ شماریات کی رپورٹ کے مطابق اگست 2018 تا اگست تک 2019 گائے کا گوشت فی کلو گرام 45 روپے، بکرے کا گوشت 84 روپے فی کلو گرام مہنگا ہوا اور زندہ برائلر مرغی کی قیمت میں 61 روپے اضافہ ہوا۔

رپورٹ کے مطابق ایک سال میں تازہ دوھ اور دہی کی قیمت میں 7،7 روپے فی کلو اضافہ ہوا اور ڈھائی کلو گرام کوکنگ آئل 82 روپے مہنگا ہوا۔ ادارہ شماریات کی رپورٹ کے مطابق مسور کی دال 12روپے، مونگ کی دال 57، ماش کی دال 34 اور چنے کی دال 13 روپے فی کلو مہنگی ہوئی جبکہ ایک کلو گرام چینی کی قیمت میں 20 روپے اضافہ ہوا۔

ادارہ شماریات کے مطابق ایک برس میں لہسن 133 روپے فی کلو، آلو 7 روپے، پیاز 23 روپے اور ٹماٹر 12 روپے فی کلو مہنگے ہوئے۔ اعداد و شمار کے مطابق ایک برس میں 200 گرام چائے کی قیمت میں 16 روپے اضافہ ہوا۔