تازہ ترین
ہوئے تم دوست جس کے دشمن اس کا آسماں کیوں ہوآخر دنیا ختم ہونے کی کتنی پیش گوئیاں کی جائیں گی!ترقی کیلئے شرح سود میں کمی ناگزیر ہے۔ کاٹیآٹا سستا ہونے کے باوجود عوام 70 روپے فی کلو خریدنے پر مجبورکورونا وائرس کے پاکستان میں پھیلنے کا خطرہسابق آمر مشرف کو آئین توڑنے پر سزائے موت کا حکمپی ٹی آئی رکن پنجاب اسمبلی نے 37 ایکڑ زمین ہتھیالی’’سارے پاکستان میں ملک ریاض جیسی مافیا سرگرم ہے‘‘اظہر علی ٹیسٹ اور بابر ٹی ٹوئنٹی کپتان مقرر۔ سرفراز فارغمولانا فضل الرحمان کا دھرنے کا اعلان۔ کنٹینرز بھی بنوالئےالیکشن کمیشن ارکان کے مستقبل کا فیصلہ ہونے کے قریبزلزلے سے اموات کی تعداد 38 ہوگئی۔ سینکڑوں افراد بے یارو مددگاربائیو میٹرک تصدیق کے باوجود بینک اکاؤنٹس آپریشنل نہ ہونیکی شکایاتملکی تاریخ میں پہلی بار مرغی 400 روپے کی ہوگئیگستاخ ٹیچر نوتن لعل کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہنارتھ کراچی صنعتی ایریا میں ڈاکوؤں کا راجپنجاب حکومت نے ایڈز کنٹرول پروگرام کے فنڈز روک لئےافغانستان میں این ڈی ایس کمپاؤنڈ کے قریب دھماکہ۔ 30 ہلاکافغان طالبان کے حملے تیز۔ غنی حکومت کیلئے الیکشن درد سر بن گیاپولیسٹر فلامنٹ یارن پر دوبارہ ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کئے جانے کا امکان

آٹا سستا ہونے کے باوجود عوام 70 روپے فی کلو خریدنے پر مجبور

aatta buhran
  • واضح رہے
  • جنوری 29, 2020
  • 5:25 شام

اوپن مارکیٹ میں 100 کلو گرام آٹے کی بوری کی قیمت میں گزشتہ دنوں کے دوران 700 روپے کلو کمی واقع ہوئی ہے۔ تاہم فلور ملز مالکان آٹا کے نرخ میں کمی لانے پر تیار نہیں

کراچی کے ہول سیل گروسرز نے گندم کی قیمت میں کمی کے باوجود عوام کو مہنگے داموں آٹے کی فروخت پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ گندم کی فی کلو قیمت میں 8 روپے تک کمی کے باوجود چکی مالکان 70 روپے کلو پر آٹا سپلائی کررہے ہیں۔ جس کے باعث دکاندار بھی پرانے نرخ پر آٹا فروخت کر رہے ہیں اور اس حوالے سے کوئی چیک اینڈ بیلنس نہیں ہے۔ اوپن مارکیٹ میں گندم کی فی بوری 5200 سے کم ہوکر 4500 روپے ہوگئی ہے۔

دالوں، چاول، چینی، مصالحہ جات، گندم و دیگر اجناس کے تھوک تاجروں، درآمد کنندگان و برآمد کنندگان کی نمائندہ کراچی ہول سیل گروسرز ایسوسی ایشن(کے ڈبلیو جی اے) کے چیئرمین ملک ذوالفقار علی نے اوپن مارکیٹ میں گندم کی قیمت میں کمی کے باوجود چکی مالکان کی جانب سے آٹے کی قیمتوں میں کمی نہ کرنے پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کمشنر کراچی سے مطالبہ کیا ہے کہ گندم کی قیمت میں کمی کے مطابق چکی مالکام کو پابند کرتے ہوئے ریٹیل مارکیٹ میں آٹے کی قیمت میں کمی کو یقینی بنایا جائے تاکہ عوام کو ریلیف مل سکے۔

انہوں نے ایک بیان میں کہا کہ پاسکو کی جانب سے سندھ حکومت کو گندم کی فراہمی کے نتیجے میں اوپن مارکیٹ میں گندم کی فی کلو قیمت میں 7 سے 8 روپے کمی کے ساتھ 100 کلو کی بوری کی قیمت میں 5400 روپے سے کم ہو کر 4400 سے 4500 روپے ہو گئی ہے۔ اس طرح بوری کی قیمت میں تقریباً 800 سے 900 روپے کمی آئی ہے لہٰذا فلور ملز کی طرح چکی مالکان کو بھی آٹے کی فی کلو قیمت میں کمی کرنی چاہیے۔ مگر چکی مالکان سستی گندم خریدنے کے باوجود عوام کو اب بھی 70 روپے فی کلو مہنگے داموں آٹا فروخت کررہے ہیں جو کہ عوام کے ساتھ زیادتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ چکی مالکان 70 روپے فی کلو کے حساب سے 5 کلو کا بیگ 350 اور 10 کلو کا بیگ 700 روپے میں فروخت کررہے ہیں۔ لہٰذا گندم کی کم ہوتی قیمت کے باوجود چکی مالکان کا آٹے کی فی کلو قیمت میں کمی نہ کرنا منافع خوری کے مترادف ہے۔