تازہ ترین
شپنگ لائنز، ٹرمینل آپریٹرز کی جانب سے اضافی چارجز و جرمانوں پر کراچی چیمبر کا اظہار تشویشراشن تقسیم کے نام پر غریب کی عزت نفس مجروح کی جاتی ہے۔ حبیب جعفریانڈونیشیا نے کورونا وائرس کے باعث رواں برس “حج “منسوخ کر دیالوٹو پاکستان کوشہروز سبزواری اور صدف کنول کی شادی: ’تہمت لگائی ہے تو اب سامنے آ کر ثابت بھی کریں‘“مے ڈے، مے ڈے، ۔ ۔ ۔ “کرونا وائرس: لاک ڈاؤن کے بعد ملکہ برطانیہ پہلی بار منظرِ عام پرمادہ اور روحعمران خان کو خواتین سے بڑی محبت اور لگاؤ ہے۔ جسٹس وجیہیہ خوشیاں تم بن ادھوری* قلمکار: *عاشق علی بخاری*مسجد نبویﷺ کو عام شہریوں کیلئے کھول دیا گیا، احتیاطی تدابیر کے ساتھ نماز فجر اداچین انڈیا سرحد کشیدگی: چین نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی ثالثی کی پیشکش کو ٹھکرا دیامسلمانوں کے عظیم خلیفہ حضرت عمر بن عبد العزیز رحمہ اللہ علیہ اور انکی اھلیہ کی قبروں کی بے حرمتی کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ھے۔امریکہ میں سیاہ فام کے قتل پر پُرتشدد مظاہرے شدت اختیار کرگئےٹڈی دل کی آفت اور حکمرانوں کی نااہلیفوربز میگزین: کائیلی جینر کا نام ’سیلف میڈ‘ ارب پتی افراد کی فہرست سے نکال دیا گیاجج اور عمرہ حکم ثانی تک معطلحکومت طلباء کے مستقبل سے نہ کھیلے ،فوری سکول کھولے جائیں:پرائیویٹ سکولز ایسوسی ایشنکوٹ مومن میں یوم تکبیر کے سلسلہ میں تقریباداسی اور طیش،رؤف کلاسرا،،،

حکومت معیشت کی بحالی کےلئے انقلابی فیصلے کرے۔ میاں زاہد حسین

Untitled
  • واضح رہے
  • مئی 20, 2020
  • 6:59 شام

صارفین کا اعتماد متاثر ہوا ہے، بحال کیا جائے۔ڈیم کی تعمیر سے سیمنٹ سیکٹر میں نئی سرمایہ کاری ہوگی۔ صدر پی بی آئی ایف

ایف پی سی سی آئی بزنس مین پینل کے سینئر وائس چیئرمین اور ،پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م کے صدر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ لاک ڈاؤن میں نرمی کے بعد حکومت معیشت کی بحالی کے لئے انقلابی فیصلے کرے۔ معیشت کو رواں کرنے کے لئے کاروبار دوست ٹیکس پالیسیاں بنائی جائیں، تمام شعبوں پر ٹیکس کا بوجھ یکساں بانٹا جائے اور ایک سال تک تمام شعبوں میں سرمایہ کاری کرنے والوں سے ذرائع آمدن نہ پوچھنے کی یقین دہانی کروائی جائے تو موجودہ مایوس کن صورتحال میں ڈرامائی تبدیلی آ سکتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ افراطِ زر میں کمی کے باوجود اہم شعبوں میں پے درپے بحرانوں سے کاروباری برادری اور صارفین کا اعتماد بری طرح متاثر ہوا ہے جبکہ عوام کی بڑی تعداد بے روزگاری سے متاثر ہوئی ہے جنکی بحالی کے لئے اقدامات کئے جائیں۔

انہوں نے کہا کہ زرعی شعبہ پر لاک ڈاءون لاگو نہیں کیا گیا اور اس سیکٹر پر ایسی صورتحال کے فوری اثرات مرتب بھی نہیں ہوتے اس لئے گزشتہ چند ماہ کے دوران کپاس کی فصل کو چھوڑ کر اسکی مجموعی کارکردگی صنعت، خدمات اور ریٹیل وغیرہ سے بہتر رہی ہے جو ملک میں فوڈ سیکیورٹی کو یقینی بنانے کے لئے اہم ہے مگر اس شعبہ کو منافع خوروں اور ذخیرہ اندوزوں سے بچانے کے لئے فوری اور نتیجہ خیز اقدامات کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے دیامر بھاشا ڈیم کی تعمیر کے فیصلے سے سیمنٹ سیکٹر میں بھاری سرمایہ کاری کا امکان ہے کیونکہ اس منصوبے کے لئے پانچ سال تک سالانہ پچاس لاکھ ٹن سیمنٹ درکار ہو گا۔

میاں زاہد حسین نے بزنس کمیونٹی سے گفتگو میں کہا کہ2100 ارب روپے کے اس منصوبے میں ابتدائی طور پر 442 ارب روپے کے ٹھیکے دے دئیے گئے ہیں جس سے ہزاروں افراد کو روزگار بھی مل رہا ہے ۔ انھوں نے کہا کہ نیا پاکستان ہاؤسنگ پلان کے تحت پچاس لاکھ گھروں کی تعمیر کا وعدہ کیا گیا ہے جس پر مکمل عمل درآمد مشکل ہے مگر جتنا بھی ہو اس سے بھی کنسٹرکشن انڈسٹری کی بحالی میں مدد ملے گی جبکہ کنسٹرکشن پیکیج بھی اپنا کردار ادا کرے گا۔

واضح رہے

اردو زبان کی قابل اعتماد ویب سائٹ ’’واضح رہے‘‘ سنسنی پھیلانے کے بجائے پکّی خبر دینے کے فلسفے پر قائم کی گئی ہے۔ ویب سائٹ پر قومی اور بین الاقوامی حالات حاضرہ عوامی دلچسپی کے پہلو کو مدنظر رکھتے ہوئے پیش کئے جاتے ہیں۔

واضح رہے