تازہ ترین
اوورسیز پاکستانیوں کی قانونی معاونت کیلئے ادارہ بنانے کا فیصلہاظہر علی ٹیسٹ اور بابر ٹی ٹوئنٹی کپتان مقرر۔ سرفراز فارغمولانا فضل الرحمان کا دھرنے کا اعلان۔ کنٹینرز بھی بنوالئےالیکشن کمیشن ارکان کے مستقبل کا فیصلہ ہونے کے قریبزلزلے سے اموات کی تعداد 38 ہوگئی۔ سینکڑوں افراد بے یارو مددگاربائیو میٹرک تصدیق کے باوجود بینک اکاؤنٹس آپریشنل نہ ہونیکی شکایاتملکی تاریخ میں پہلی بار مرغی 400 روپے کی ہوگئیگستاخ ٹیچر نوتن لعل کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہنارتھ کراچی صنعتی ایریا میں ڈاکوؤں کا راجپنجاب حکومت نے ایڈز کنٹرول پروگرام کے فنڈز روک لئےافغانستان میں این ڈی ایس کمپاؤنڈ کے قریب دھماکہ۔ 30 ہلاکافغان طالبان کے حملے تیز۔ غنی حکومت کیلئے الیکشن درد سر بن گیاپولیسٹر فلامنٹ یارن پر دوبارہ ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کئے جانے کا امکانسیاسی قیدیوں کو ڈیل پر مجبور کرنے کیلئے بلیک میلنگ شروعوفاق میں ساری ٹیم مشرف کی ہے۔ رضا ربانیپی ٹی آئی حکومت کے خاتمے کیلئے نواز شریف کا بڑا فیصلہسنسرشپ کا سامنا کرنے والے ممالک میں پاکستان کا 39واں نمبردورہ پاکستان کیلئے سری لنکا کی بے بی ٹیم کا اعلانبھارت کشمیر سے کرفیو کیوں نہیں اٹھا رہا؟ پاکستانی حکومت غافلجنوبی افریقہ: ہر 3 گھنٹے میں ایک عورت قتل کردی جاتی ہے

دنیا کے طویل القامت جانور کو ناپیدی کا خطرہ

دنیا کے طویل القامت جانور کو ناپیدی کا خطرہ
  • واضح رہے
  • مئی 1, 2019
  • 2:45 شام

عالمی ادارہ برائے تحفظ فطرت آئی یو سی این کی ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق 3 دہائیوں میں زرافوں کی آبادی 40 فیصد تک کم ہوئی ہے۔

عالمی ادارہ برائے تحفظ فطرت آئی یو سی این نے کہا ہے کہ افریقی جنگلات میں انسانوں کی سرگرمیوں کے باعث زرافوں کی دو نسلیں معدومی کے خطرے سے دوچار ہیں، جس کے باعث انہیں انتہائی خطرے سے دوچار جنگلی حیات کی فہرست میں شامل کرلیا گیا ہے۔

آئرش پوسٹ کے مطابق عالمی ادارے نے کہا کہ افریقی ممالک میں کوردوفن اور نوبین نسل کے زرافوں کی آبادی تیزی سے سکڑ رہی ہے۔ جبکہ ایک اور نسل ریٹیکولٹڈ بھی خطرے سے دوچار ہے۔ اس کا اندازہ ان اعداد و شمار سے لگایا جا سکتا ہے کہ 90 کی دہائی سے زرافوں کی تعداد میں 40 فیصد کمی واقع ہوئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق کوردوفن زرافہ کیمرون، چاڈ، سینٹرل جمہوریہ افریقہ اور مغربی سوڈان میں پایا جاتا ہے۔ جبکہ نوبین زرافے ایتھوپیا، کینیا، یوگینڈا، سوڈان، جنوبی سوڈان میں پائے جاتے ہیں۔ اس کے علاوہ دونوں اقسام کے زرافے ایرٹریا، گینیا، برکینا فاسو، نائجیریا، ملاوی، مورتانیہ اور سینیگال میں بھی موجود ہیں، جہاں ان کی نسل معدومی کی طرف بڑھ رہی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ دنیا میں اب صرف 5200 کوردوفن اور 17 ہزار 785 نیوبن زرافے باقی رہ گئے ہیں۔

واضح رہے کہ بر اعظم افریقہ میں زرافہ کی نو مختلف اقسام پائی جاتی ہیں اور اس کی یہ اقسام اس کی جلد کے دھبوں سے پہچانی جاتی ہیں، مگر ان سبھی کو اپنی بقا کا خطرہ لاحق ہے۔ آئی یو سی این اسپیشل سروائیول کمیشن کی شریک چیئرمین جولیان فیسینی نے بتایا ہے کہ افریقہ میں کان کنی، تعمیراتی کام، غیر قانونی شکار اور زراعت کے فروغ کے باعث ذرافے اپنی آبائی پناہ گاہوں یا فطری گھر سے محروم ہوجاتے ہیں۔

جولیان فیسینی نے کہا کہ افریقہ کے جنوبی حصوں میں زرافوں کو زیادہ خطرہ لاحق نہیں ہے، مگر مشرقی، سینٹرل اور مغربی افریقہ میں دنیا کے سب سے طویل القامت جانور ناپید ہو رہے ہیں۔ 90 کی دہائی سے زرافہ کی آبادی مسلسل کم ہو رہی ہے، جو لمحہ فکریہ ہے۔

رپورٹ کے مطابق 1985 تک دنیا بھر میں زرافوں کی تعداد ایک لاکھ 63 ہزار تھی تاہم اب یہ گھٹ کر صرف 97 ہزار رہ گئی ہے۔