تازہ ترین
اوورسیز پاکستانیوں کی قانونی معاونت کیلئے ادارہ بنانے کا فیصلہاظہر علی ٹیسٹ اور بابر ٹی ٹوئنٹی کپتان مقرر۔ سرفراز فارغمولانا فضل الرحمان کا دھرنے کا اعلان۔ کنٹینرز بھی بنوالئےالیکشن کمیشن ارکان کے مستقبل کا فیصلہ ہونے کے قریبزلزلے سے اموات کی تعداد 38 ہوگئی۔ سینکڑوں افراد بے یارو مددگاربائیو میٹرک تصدیق کے باوجود بینک اکاؤنٹس آپریشنل نہ ہونیکی شکایاتملکی تاریخ میں پہلی بار مرغی 400 روپے کی ہوگئیگستاخ ٹیچر نوتن لعل کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہنارتھ کراچی صنعتی ایریا میں ڈاکوؤں کا راجپنجاب حکومت نے ایڈز کنٹرول پروگرام کے فنڈز روک لئےافغانستان میں این ڈی ایس کمپاؤنڈ کے قریب دھماکہ۔ 30 ہلاکافغان طالبان کے حملے تیز۔ غنی حکومت کیلئے الیکشن درد سر بن گیاپولیسٹر فلامنٹ یارن پر دوبارہ ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کئے جانے کا امکانسیاسی قیدیوں کو ڈیل پر مجبور کرنے کیلئے بلیک میلنگ شروعوفاق میں ساری ٹیم مشرف کی ہے۔ رضا ربانیپی ٹی آئی حکومت کے خاتمے کیلئے نواز شریف کا بڑا فیصلہسنسرشپ کا سامنا کرنے والے ممالک میں پاکستان کا 39واں نمبردورہ پاکستان کیلئے سری لنکا کی بے بی ٹیم کا اعلانبھارت کشمیر سے کرفیو کیوں نہیں اٹھا رہا؟ پاکستانی حکومت غافلجنوبی افریقہ: ہر 3 گھنٹے میں ایک عورت قتل کردی جاتی ہے

بھارتی ریاست مہاراشٹر میں 4 ماہ کے دوران 808 کسانوں کی خودکشی

بھارتی ریاست مہاراشٹر میں 4 ماہ کے دوران 808 کسانوں کی خودکشی
  • واضح رہے
  • جون 13, 2019
  • 1:39 صبح

خشک سالی کے باعث انتہائی قدم اٹھانے والوں کی تعداد گوکہ گزشتہ برس سے کم ہے، مگر کسان رہنماؤں کو فکر ہے کہ مون سون میں تاخیر صورتحال مزید بگاڑ دے گی۔

مہاراشٹر میں 2019 کے ابتدائی چار ماہ میں 808 کسانوں نے خودکشی کی ہے۔ اس لحاظ سے اوسطاً چار کسان روزانہ خودکشی کر رہے تھے۔ ٹائمز آف انڈیا کی رپورٹ کے مطابق یہ تعداد گزشتہ برس اسی مدت میں اپنی زندگی کا خاتمہ کرنے والے کسانوں کی تعداد سے کم ہے۔ 2018 کے شروعاتی چار مہینوں میں 896 کسانوں نے خودکشی کی تھی۔

مہاراشٹر کے ودربھ علاقے میں اس سال سب سے زیادہ کسانوں نے خودکشی کی۔ اپریل کے آخر تک یہاں کسانوں کی خودکشی کے 344 معاملے سامنے آئے۔ پانی کے بحران کے باعث مراٹھواڑا میں 269 کسانوں نے خودکشی کی۔ شمالی مہاراشٹر میں 161، مغربی مہاراشٹر میں 34 کسانوں نے خودکشی کی ہے۔

اسی طرح کونکن علاقے میں کسانوں کی خودکشی کا کوئی معاملہ سامنے نہیں آیا ہے۔ ریاست میں 2019 کا سال کسانوں کے لئے بہت چیلنج بھرا رہا۔ مہاراشٹر کے 42 فیصد علاقے سوکھے کا سامنا کر رہے ہیں۔ اس سوکھے نے ریاست کے 60 فیصد کسانوں کو متاثر کیا ہے، اس سے بڑے پیمانے پر کسانوں کی فصلیں تباہ ہوئی ہیں۔

رواں برس کے اوائل میں میں بھارتی حکومت نے ’’پردھانمنتری کسان ندھی سمان یوجنا‘‘ کا اعلان کیا تھا، جس کے تحت چھوٹے اور حد فاصل کسانوں کو 6 ہزار روپے کی اقتصادی رقم مہیا کرائی جانی ہے۔ ریاست کے کسان رہنماؤں کا کہنا ہے کہ تاخیرسے آیا مون سون ریاست میں لمبی مدت کیلئے زرعی بحران کی حالت کو اور بدتّر کر سکتا ہے۔

کسان سبھا کے رہنما اجیت نوالے نے کہا کہابھی سب سے اہم معاملہ خسک سالی اور پانی کا بحران ہے، جس نے فصلوں کو تباہ کر دیا اور دودھ کی پیداوار کو گھٹا دیا۔ اگر مون سون تاخیرسے آیا تو مویشیوں کیلئے چارے کا بحران پیدا ہو سکتا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ مہاراشٹر میں 17 جون کو مون سون کے دستک دینے کا امکان ہے۔ مہاراشٹر حکومت کا کہنا ہے کہ معن سون کے آنے تک کافی مقدار میں چارہ اور پانی دستیاب ہے۔