تازہ ترین
عمران خان کو خواتین سے بڑی محبت اور لگاؤ ہے۔ جسٹس وجیہیہ خوشیاں تم بن ادھوری* قلمکار: *عاشق علی بخاری*مسجد نبویﷺ کو عام شہریوں کیلئے کھول دیا گیا، احتیاطی تدابیر کے ساتھ نماز فجر اداچین انڈیا سرحد کشیدگی: چین نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی ثالثی کی پیشکش کو ٹھکرا دیامسلمانوں کے عظیم خلیفہ حضرت عمر بن عبد العزیز رحمہ اللہ علیہ اور انکی اھلیہ کی قبروں کی بے حرمتی کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ھے۔امریکہ میں سیاہ فام کے قتل پر پُرتشدد مظاہرے شدت اختیار کرگئےٹڈی دل کی آفت اور حکمرانوں کی نااہلیفوربز میگزین: کائیلی جینر کا نام ’سیلف میڈ‘ ارب پتی افراد کی فہرست سے نکال دیا گیاجج اور عمرہ حکم ثانی تک معطلحکومت طلباء کے مستقبل سے نہ کھیلے ،فوری سکول کھولے جائیں:پرائیویٹ سکولز ایسوسی ایشنکوٹ مومن میں یوم تکبیر کے سلسلہ میں تقریباداسی اور طیش،رؤف کلاسرا،،،اختلاف کرنے پر مہماتیر محمد کو پارٹی نے نکال دیابینظیر بھٹو کے بارے میں’توہین آمیز‘ ٹویٹس: سنتھیا رچی کے خلاف ایف آئی اے میں درخواست جمع کروا دی گئیامیر جماعت اسلامی سراج الحق کی کوٹ مومن آمدشدید گرمی۔ ارسلان ویلفیئر ٹرسٹ نے سندھ کے گوٹھوں میں ہینڈ پمپ لگانے کا بیڑا اٹھالیاکوٹ مومن پریس کلب کے نمائندہ وفد کی ایس ایچ او سے ملاقاتناجائز تعلقات کا شبہ،گھر بلواکر نوجوان قتلپاکستان اور اسرائیل کی دشمنی تاریخی آئنیہ میںعظمیٰ خان اور وکیل کی پریس کانفرنس:’عظمی خان کی جان کو خطرات لاحق ہیں، سکیورٹی فراہم کی جائے‘

پنجاب پولیس کی حراست میں 17 افراد کی ہلاکت کا انکشاف

پنجاب پولیس کی حراست میں 17 افراد کی ہلاکت کا انکشاف
  • واضح رہے
  • ستمبر 8, 2019
  • 4:59 شام

تشدد کے واقعات پر سلیکٹڈ وزیر اعلیٰ اور آئی جی نے نوٹس لئے ہیں، لیکن پولیس گردی میں کمی کے بجائے مسلسل اضافہ ہورہا ہے

پاکستان کے سب سے بڑے صوبے پنجاب کی پولیس شہریوں کیلئے دہشت کی علامت بن گئی۔ ذہنی معذور صلاح الدین سمیت کئی ملزمان دوران حراست پولیس کے بدترین تشدد کے باعث زندگی کی بازی ہار گئے۔ آج بھی صوبے کے دارالحکومت لاہور میں ایک شہری پولیس تشدد کی بھینٹ چڑھ گیا، جس کے بعد پنجاب میں ایک برس کے دوران پولیس کی حراست میں ہلاک ہونے والے افراد کی 17 ہوگئی ہے۔

عامر مسیح پر تشدد کی سی سی ٹی وی فوٹیج بھی منظر عام پر آ گئی۔ اسے انتہائی تشویشناک حالت میں موٹر سائیکل پر بٹھاکر اسپتال لایا گیا۔ جبکہ زمین پر گرنے کے بعد بھی پولیس اہلکاروں نے اسپتال کے احاطے میں اس پر تشدد کیا اور لاتیں ماریں۔ اور اسے گھسیٹ پر اسپتال کے اندر لے کر گئے۔

پوسٹ مارٹم رپورٹ میں بھی عامر مسیح پر تشدد کی تصدیق ہوگئی ہے۔ جس میں کہا گیا ہے کہ اس کے پاؤں، بازؤں اور کمر پر زخموں کے نشانات ہیں۔ جبکہ اس کی پسلیاں بھی ٹوٹی ہوئی ہیں۔ واضح رہے کہ عامر مسیحی کو 28 اگست کو چوری کے مقدمے میں گرفتار کیا گیا جہاں پولیس نے اسے وحشیانہ تشدد کا نشانہ بنایا جس سے وہ ہلاک ہوگیا۔

پنجاب میں پولیس کبھی خفیہ عقوبت خانوں میں شہریوں کو تشدد کا نشانہ بناتی ہے تو کہیں سرعام پر ان پر تشددد کرتی نظر آتی ہے۔ پنجاب پولیس کے عقوبت خانوں میں بھی شہریوں پر تشدد اور ہلاکت معمول بن چکے ہیں۔

حال ہی میں رحیم یار خان میں اے ٹی ایم کارڈ چوری کرنے والا صلاح الدین بھی حوالات میں پولیس تشدد سے ہلاک ہوا۔ صلاح الدین کے والد کی درخواست پر متعلقہ تھانے کے ایس ایچ او، اے ایس آئی اور تقتیشی افسر کیخلاف مقدمہ درج کر لیا گیا ہے، تاہم اب تک کسی اہلکار اور افسر کو سزا نہیں دی گئی۔

اسی طرح لاہور کے علاقے گجرپور میں چند روز پہلے پولیس کے ٹارچر سیل میں شہری امجد حسین کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا جو اسپتال میں دم توڑ گیا۔ پنجاب پولیس کے اعلیٰ حکام تشدد کے بڑھتے واقعات پر خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں۔

پریشان کن امر یہ ہے کہ محض تین ماہ میں پولیس حراست میں 5 ملزمان کی جان چلی گئی۔ لاہور میں 3 ملزمان پولیس حراست میں ہلاک ہوئے، پولیس تھانہ اکبری گیٹ میں ملزم کی پھندہ لگی لاش ملی، گجر پورہ ٹارچر سیل میں ملزم امجد پر مبینہ تشدد سے ہلاک ہوا۔ اوکاڑہ کی تحصیل بصیرپور میں بھی چوری کے مقدمہ میں گرفتار ملزم ہلاک ہوگیا۔ ملزم قربان عرف قربانی چوری کے مقدمہ میں عدالت کی طرف سے ریمانڈ پر تھا۔

صوبے کے سلیکٹڈ وزیر اعلیٰ نے پنجاب پولیس کی دہشت گردی کی خبریں سامنے آنے پر بہت سے واقعات پر نوٹس لیا ہے۔ جبکہ آئی جی پنجاب نے بھی نوٹس لئے، کئی انکوائری کمیٹیاں بنائی گئی ہیں، لیکن پنجاب پولیس کی غنڈہ گردی کم ہونے کے بجائے مزید بڑھ رہی ہے اور خواتین پر بھی تشدد اور انہیں ٹارچر کرنے کے واقعات سامنے آئے ہیں۔

واضح رہے

اردو زبان کی قابل اعتماد ویب سائٹ ’’واضح رہے‘‘ سنسنی پھیلانے کے بجائے پکّی خبر دینے کے فلسفے پر قائم کی گئی ہے۔ ویب سائٹ پر قومی اور بین الاقوامی حالات حاضرہ عوامی دلچسپی کے پہلو کو مدنظر رکھتے ہوئے پیش کئے جاتے ہیں۔

واضح رہے