تازہ ترین
مولانا فضل الرحمان کا دھرنے کا اعلان۔ کنٹینرز بھی بنوالئےالیکشن کمیشن ارکان کے مستقبل کا فیصلہ ہونے کے قریبزلزلے سے اموات کی تعداد 38 ہوگئی۔ سینکڑوں افراد بے یارو مددگاربائیو میٹرک تصدیق کے باوجود بینک اکاؤنٹس آپریشنل نہ ہونیکی شکایاتملکی تاریخ میں پہلی بار مرغی 400 روپے کی ہوگئیگستاخ ٹیچر نوتن لعل کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہنارتھ کراچی صنعتی ایریا میں ڈاکوؤں کا راجپنجاب حکومت نے ایڈز کنٹرول پروگرام کے فنڈز روک لئےافغانستان میں این ڈی ایس کمپاؤنڈ کے قریب دھماکہ۔ 30 ہلاکافغان طالبان کے حملے تیز۔ غنی حکومت کیلئے الیکشن درد سر بن گیاپولیسٹر فلامنٹ یارن پر دوبارہ ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کئے جانے کا امکانسیاسی قیدیوں کو ڈیل پر مجبور کرنے کیلئے بلیک میلنگ شروعوفاق میں ساری ٹیم مشرف کی ہے۔ رضا ربانیپی ٹی آئی حکومت کے خاتمے کیلئے نواز شریف کا بڑا فیصلہسنسرشپ کا سامنا کرنے والے ممالک میں پاکستان کا 39واں نمبردورہ پاکستان کیلئے سری لنکا کی بے بی ٹیم کا اعلانبھارت کشمیر سے کرفیو کیوں نہیں اٹھا رہا؟ پاکستانی حکومت غافلجنوبی افریقہ: ہر 3 گھنٹے میں ایک عورت قتل کردی جاتی ہےعدلیہ نے ملک کو تباہی کے دہانے پر پہنچا دیا۔ حشمت حبیبپنجاب پولیس کی حراست میں 17 افراد کی ہلاکت کا انکشاف

الیکشن کمیشن ارکان کے مستقبل کا فیصلہ ہونے کے قریب

الیکشن کمیشن ارکان کے مستقبل کا فیصلہ ہونے کے قریب
  • واضح رہے
  • اکتوبر 2, 2019
  • 6:57 شام

سندھ ہائی کورٹ کی جانب سے جسٹس (ر) الطاف قریشی اور جسٹس (ر) قیصر خاتون کی غیر آئینی تقرری پر محفوظ فیصلہ جلد سنایا جائے گا

الیکشن کمیشن کے دو ارکان کی تقرری کے سلسلے میں سندھ ہائی کورٹ کا فیصلہ جلد متوقع ہے۔ الطاف قریشی اور قیصر خاتون کی تقرری کیخلاف عام لوگ اتحاد نے عدالت سے رجوع کیا تھا، جس کے سربراہ سندھ ہائی کورٹ کے سابق چیف جسٹس وجیہ الدین احمد ہیں۔

واضح رہے کہ سیاسی جماعت عام لوگ اتحاد کے قائم مقام چیئرمین جسٹس (ر) وجیہ الدین نے سندھ ہائی کورٹ میں آئینی درخواست دائر کی تھی، جس میں یہ استدعا کی گئی تھی کہ الیکشن کمیشن کے دو ارکان جسٹس (ر) الطاف قریشی اور جسٹس (ر) قیصر خاتون کی تقرری آئین کے مطابق نہیں ہوئی، کیونکہ یہ دونوں ہائی کورٹ کے جج رہ چکے ہیں۔

عام لوگ اتحاد کی طرف سے موقف اختیار کیا گیا تھا کہ آئین کی دفعہ 207(2) کے ماتحت ہائی کورٹ کا جج اپنی ریٹائرمنٹ کے دو سال کے عرصے میں کسی بھی سرکاری عہدے پر فائز نہیں ہو سکتا۔ تاہم ان دونوں ججز کی تقرری اس عرصے کے دوارن کر دی گئی۔

واضح رہے کہ الطاف قریشی لاہور ہائی کورٹ اور ارشاد خاتون پشاور ہائی کورٹ کی جج رہ چکی ہیں۔

کیس کی 15 سماعتیں سندھ ہائی کورٹ کی دو پنچوں نے یکے بعد دیگرے کیں۔ اس حوالے سے جسٹس عقیل عباسی کی سربراہی میں قائم بنچ نے دو ستمبر کو اپنا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔

اس اثنا میں الیکشن کمیشن کے دونوں ارکان نے سپریم کورٹ میں درخواست دائر کی کہ اس کیس کو سندھ ہائی کورٹ سے اسلام آباد منتقل کیا جائے، کیونکہ الیکشن کمیشن اسلام آباد میں ہے۔

ادھر عام لوگ اتحاد نے مذکورہ درخواست کی مخالفت کی اور بتایا کہ الیکشن کمیشن کی عمل داری پورے پاکستان میں ہے، لہٰذا کسی بھی ہائی کورٹ میں یہ درخواست دائر کی جا سکتی ہے۔

اس پر سپریم کورٹ نے حکم دیا کہ یہ مسئلہ سندھ ہائی کورٹ کے دائرہ اختیار میں آتا ہے یا نہیں یہ فیصلہ سندھ ہائی کورٹ نے کرنا ہے۔ لیکن چونکہ الطاف قریشی اور قیصر خاتون کی جانب سے یہ کہا گیا تھا کہ ہمارے وکیل تقریباً 15 پیشیوں پر عدالت میں حاضر نہ ہو سکے اور انہوں ںے بحث نہیں کی، لہٰذا اس کا موقع دیا جائے۔

اس ضمن میں سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ 30 ستمبر تک دونوں الیکشن کمشین ارکان اپنے تحریری دلائل عدالت میں پیش کر دیں۔

معلوم ہوا ہے کہ دونوں نے اپنے دلائل پیش کر دیئے ہیں۔ اب متوقع طور پر سندھ ہائی کورٹ الیکشن کمیشن ارکان کی غیر آئینی تقرری سے متعلق جلد محفوظ فیصلہ سنائے گی۔