تازہ ترین
اوورسیز پاکستانیوں کی قانونی معاونت کیلئے ادارہ بنانے کا فیصلہاظہر علی ٹیسٹ اور بابر ٹی ٹوئنٹی کپتان مقرر۔ سرفراز فارغمولانا فضل الرحمان کا دھرنے کا اعلان۔ کنٹینرز بھی بنوالئےالیکشن کمیشن ارکان کے مستقبل کا فیصلہ ہونے کے قریبزلزلے سے اموات کی تعداد 38 ہوگئی۔ سینکڑوں افراد بے یارو مددگاربائیو میٹرک تصدیق کے باوجود بینک اکاؤنٹس آپریشنل نہ ہونیکی شکایاتملکی تاریخ میں پہلی بار مرغی 400 روپے کی ہوگئیگستاخ ٹیچر نوتن لعل کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہنارتھ کراچی صنعتی ایریا میں ڈاکوؤں کا راجپنجاب حکومت نے ایڈز کنٹرول پروگرام کے فنڈز روک لئےافغانستان میں این ڈی ایس کمپاؤنڈ کے قریب دھماکہ۔ 30 ہلاکافغان طالبان کے حملے تیز۔ غنی حکومت کیلئے الیکشن درد سر بن گیاپولیسٹر فلامنٹ یارن پر دوبارہ ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کئے جانے کا امکانسیاسی قیدیوں کو ڈیل پر مجبور کرنے کیلئے بلیک میلنگ شروعوفاق میں ساری ٹیم مشرف کی ہے۔ رضا ربانیپی ٹی آئی حکومت کے خاتمے کیلئے نواز شریف کا بڑا فیصلہسنسرشپ کا سامنا کرنے والے ممالک میں پاکستان کا 39واں نمبردورہ پاکستان کیلئے سری لنکا کی بے بی ٹیم کا اعلانبھارت کشمیر سے کرفیو کیوں نہیں اٹھا رہا؟ پاکستانی حکومت غافلجنوبی افریقہ: ہر 3 گھنٹے میں ایک عورت قتل کردی جاتی ہے

کولیشن سپورٹ فنڈ بند کیا تو پاکستان سے تعلقات بہتر ہوئے۔ ٹرمپ

کولیشن سپورٹ فنڈ بند کیا تو پاکستان سے تعلقات بہتر ہوئے۔ ٹرمپ
  • واضح رہے
  • اگست 20, 2019
  • 2:06 شام

امریکی صدر نے امداد بحال نہ کرنے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا کہ غیر ملکی امداد تعلقات بہتر بنانے میں مدد فراہم نہیں کرتی۔

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے اپنے ایک تازہ بیان میں کہا ہے کہ کولیشن سپورٹ فنڈ (سی ایس ایف) کو بحال نہ کرنے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی جانب سے پاکستان کی سیکورٹی معاونت کیلئے ایک ارب 30 کروڑ ڈالر کی امداد روکے جانے کے بعد واشنگٹن اور اسلام آباد کے تعلقات میں بہتری آئی ہے۔ انہوں نے اس تاثر کو مسترد کیا کہ امداد ایک موثر خارجہ پالیسی کا ذریعہ ہے۔

نیو جرسی میں اپنے گالف ریزورٹ میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے امریکی صدر نے 22 جولائی کو عمران خان سے وائٹ ہاؤس میں ہونے والی ملاقات کا بھی حوالہ دیا اور کہا کہ یہ بہت اچھی ملاقات تھی۔

میڈیا سے گفتگو کے دوران ایک رپورٹر نے ڈونلڈ ٹرمپ کو یاد دلایا کہ انہوں نے اپنے حالیہ بجٹ میں بھی غیر ملکی امداد میں تقریباً 4 ارب ڈالر کی کمی کی تھی اور سوال کیا کہ کیا ان کا خیال ہے کہ امداد کی بحالی سے امریکہ زیادہ محفوظ ہوگا۔ امریکی صدر نے جواب میں کہا کہ میرا نہیں خیال ایسا ہوگا اور اگر میں سوچتا کہ ایسا ہوگا تو میں شاید ایسا کرتا۔

ٹرمپ نے کہا کہ میں نے پاکستان کی ایک ارب 30 کروڑ ڈالر کی ایک سال کی امداد میں کٹوتی کی تھی اور جب میں نے ایسا کیا کہ ہمارے ان سے تعلقات میں بہتری آئی۔ عمران خان سے ملاقات کا حوالہ دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم یہاں آئے، ہماری بہت اچھی ملاقات ہوئی اور اب ہمارے پاکستان سے بہت بہتر تعلقات ہیں۔

صدر ٹرمپ نے مزید کہا کہ غیر ملکی امداد تعلقات بہتر بنانے میں مدد نہیں کرتی۔

واضح رہے کہ ڈونالڈ ٹرمپ نے گزشتہ سال اعلان کیا تھا کہ جب تک پاکستان دہشت گردوں کے خلاف موثر کارروائی نہیں کر دیتا تب تک پاکستان کی ایک ارب 30 کروڑ ڈالر کی امداد بند رہے گی۔