تازہ ترین
اوورسیز پاکستانیوں کی قانونی معاونت کیلئے ادارہ بنانے کا فیصلہاظہر علی ٹیسٹ اور بابر ٹی ٹوئنٹی کپتان مقرر۔ سرفراز فارغمولانا فضل الرحمان کا دھرنے کا اعلان۔ کنٹینرز بھی بنوالئےالیکشن کمیشن ارکان کے مستقبل کا فیصلہ ہونے کے قریبزلزلے سے اموات کی تعداد 38 ہوگئی۔ سینکڑوں افراد بے یارو مددگاربائیو میٹرک تصدیق کے باوجود بینک اکاؤنٹس آپریشنل نہ ہونیکی شکایاتملکی تاریخ میں پہلی بار مرغی 400 روپے کی ہوگئیگستاخ ٹیچر نوتن لعل کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہنارتھ کراچی صنعتی ایریا میں ڈاکوؤں کا راجپنجاب حکومت نے ایڈز کنٹرول پروگرام کے فنڈز روک لئےافغانستان میں این ڈی ایس کمپاؤنڈ کے قریب دھماکہ۔ 30 ہلاکافغان طالبان کے حملے تیز۔ غنی حکومت کیلئے الیکشن درد سر بن گیاپولیسٹر فلامنٹ یارن پر دوبارہ ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کئے جانے کا امکانسیاسی قیدیوں کو ڈیل پر مجبور کرنے کیلئے بلیک میلنگ شروعوفاق میں ساری ٹیم مشرف کی ہے۔ رضا ربانیپی ٹی آئی حکومت کے خاتمے کیلئے نواز شریف کا بڑا فیصلہسنسرشپ کا سامنا کرنے والے ممالک میں پاکستان کا 39واں نمبردورہ پاکستان کیلئے سری لنکا کی بے بی ٹیم کا اعلانبھارت کشمیر سے کرفیو کیوں نہیں اٹھا رہا؟ پاکستانی حکومت غافلجنوبی افریقہ: ہر 3 گھنٹے میں ایک عورت قتل کردی جاتی ہے

اوورسیز پاکستانیوں کی قانونی معاونت کیلئے ادارہ بنانے کا فیصلہ

Asad Shamim and justice wajihuddin
  • واضح رہے
  • نومبر 5, 2019
  • 4:37 صبح

اعلان 23 نومبر کو برطانیہ کے شہر روچڈول میں منعقدہ "پاکستان لاء کانفرنس" کے موقع پر کیا جائے گا، جس میں جسٹس (ر) وجیہ الدین بطور مہمان خصوصی شرکت کریں گے۔

قانونی معاملات کا وسیع تجربہ رکھنے والے معروف پاکستانی نژاد برطانوی بزنس مین اسد شمیم نے سندھ ہائی کورٹ کے سابق چیف جسٹس، جسٹس (ر) وجیہ الدین کے ساتھ ملکر قانونی معاونت کا ادارہ قائم کرنے کا اعلان کردیا۔ اس سلسلے میں اسد شمیم نے جسٹس (ر) وجیہ الدین کو 23 نومبر کو برطانیہ کے شہر روچڈیل کے کیسلمیر کمیونٹی سینٹر میں ہونے والی "پاکستان لاء کانفرنس" میں بطور مہمان خصوصی مدعو کیا ہے۔

مذکورہ کانفرنس میں ادارے کے قیام کا باقاعدہ اعلان متوقع ہے۔ اسد شمیم کے مطابق برطانیہ میں ایسے قانونی ادارے کی بنیاد رکھی جائے گی، جس کی ایک شاخ پاکستان میں بھی ہوگی اور یہ اوورسیز پاکستانیوں کے مسائل کے حل کا مرکز ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ اس ادارے کا مقصد پاکستان میں لا انفورسمنٹ اور قانون کی صحیح معنوں میں پاسداری کو یقینی بنانا ہے۔

ادارے کا قیام قانون کی غلط تشریح اور اس کے غلط استعمال کے تدارک کیلئے بھی ضروری خیال کیا گیا ہے، تاکہ غریب کے ساتھ ظلم نہ ہو۔ انصاف طاقت ور اور غریب دونوں کیلئے یکساں ہو، اسی طرح انصاف کا بول بالا ہوگا۔

پاکستان میں ادارے کی سربراہی سندھ ہائی کورٹ کے سابق چیف جسٹس، جسٹس (ر) وجیہ الدین کریں گے، جو پورے پاکستان میں اچھی شہرت رکھتے ہیں۔

واضح رہے کہ پہلے بھی اوورز سیز پاکستانیوں کے مسائل حل کرنے کیلئے ایسے سیل بنائے گئے تھے، لیکن وہ غیر موثر رہے۔ ایسے اداروں میں لوگ اپنے مسائل لیکر جاتے تھے، مگر ان کا حل کسی کے پاس نہ تھا۔ تاہم اسد شمیم، جسٹس (ر) وجیہ الدین کے اشتراک سے ایک ایسے ادارے کے قیام کیلئے پُرعزم ہیں، جو صحیح معنوں انصاف کی فراہمی کو یقینی بنائے۔